اُردو نظم غربت

گھر سے تھوڑا دور جو شاپنگ سنٹر ہے کپڑوں کی دوکانوں کے نزدیک وہاں قلفی والے کے ٹھیلے کے پاس کہںں جہاں بہت رنگین غبارے

Read More »

دوہے

ٹوٹے پھوٹے آئینوں میں جس نے دیکھا روپ کرچی کرچی بدن کو پایا،  بگڑا ملا سروپ جگ کی جھوٹی سچی سن کر بہت لیا ہے

Read More »

تم اور سویرا

ابھی کچھ دیر باقی ہے پرندے جاگ جائیں گے ابھی کچھ دیر میں گستاخ کرنیں فاش کر دیں گی وہ برگِ گل پہ چپکے سے

Read More »

بیوگی

طلوع کے سرخ موسم میں ہمارے گھر کی چمنی سے ابلتا کچھ دھواں لے کر ہوا نے آج پھر جاناں ترا خاکہ بنایا ہے تمہارے

Read More »

تازہ ترین کتب

Welcome Back!

Login to your account below

Retrieve your password

Please enter your username or email address to reset your password.